Wednesday, 3 August 2011

سال نامہ



سرکسِ ضمیر کے۔کج زدہ خمیر کے معجزوں میں کھو گیا
چلنے والا تار پرحیرتوں میں کھوگیا 
پُل صراطِ وقت پر آتے جاتے دیکھ کر
اِک ہجومِ مست کو۔۔۔۔۔۔۔۔ہست کو الست کو
سرکسِ ضمیر کے۔۔۔کج زدہ خمیر کے ۔۔۔۔۔
معجزوں میں کھو گیا

ایڈونس کے مست مست آج میں
رقص کے سماج میں
پچھلے سال میں نے بھی۔۔۔۔آتے جاتے دیکھے ہیں
ان گنت رواں دواں
بے خبر ضمیر سے۔ شعور سے۔زمین سے
بے حسی کی شاخ سے ۔۔۔۔لوگ کچھ گرے بھی ہیں
اپنی اپنی طے شدہ سوچ سے پھرے بھی ہیں

مینو طور کے فروغ میں
پچھلے سال بھی ہوئے ہیں
ملک کچھ امیر سے امیرتر
پچھلے سال بھی رہے ہیں بس
نرخرے سے بولتے سری کپوں کی قافلے
بے خبر رواں دواں بھرے ہوئے شکم کے ساتھ

پیٹ کے شعور پر
پچھلے سال سارتر کے گرم قہوہ خانے میں۔۔۔
بحث بھی بڑی ہوئی
چائے کیلئے ابھی
لاش ہے پڑی ہوئی
منزل ء معاش کے آخری فلور پر

آرگس کی ایک ایک آنکھ میں
پچھلے سال کچھ دئیے ۔۔۔مرے بھی ہیں جلوس میں
کچھ بجھا دئیے گئے ہیں جیل میں۔۔۔۔
دہشتوں کے کھیل میں
ایک لاکھ کے قریب ۔۔۔۔۔خالی پیٹ کے کرِم
جل کے راکھ ہوگئے ہیں دیدہ ء فریب میں،آس پاس خواب کے

پچھلے سال بھی رہے ۔۔۔۔۔آدمی کے گوشت کے
ریشے دانت دانت میں۔۔۔۔صدرِامن گاہ کے
(ہاں صفائی کیلئے ،خاکروب اب نئے
ملک ملک ڈھونڈتے پھر رہے ہیں لوگ کچھ
زندگی کے روگ کچھ)
اک پہاڑی موڑ پر۔۔۔گفتگو رکی نہیں ۔۔
پھول اور توپ کی
چل رہی ہے کار میں۔۔
اک عمودی شہر میں
پچھلے سال درد کچھ روڈ پر مرے بھی ہیں
سانحے کئی مگر زخم میں ہرے بھی ہیں
پیپ سے بھرے بھی ہیں
یہ گذشتہ سال بھی 
سامنے زیوس کے 
صرف سجدہ ریز تھا
ایک ایک ثانیہ
کیا ملال خیز تھا



No comments:

Post a Comment