Wednesday, 3 August 2011

سرگوشیاں


شرم سار راتوں اور پُر ثواب صبحوں سے سرگوشیاں

صبح جیسے پُرسعادت ساعتوں کا افتتاح
رات جیسے منجمد ہو جائیں تیرہ تر گناہ
مہر جیسے خیر وبرکت کی کمائی حشر میں
چاند جیسے شاخ کی ٹوٹی ہوئی قوسِ بہار
دوپہر اس سوچ میں گم تُو نے کیوں چھوڑا مجھے
اور تارے جیسے بوندیں شال پر بکھری ہوئی
شام جیسے خون میں ڈوبی ہوئی قربان گاہ
اور شفق جیسے لہو میں گم سپاہی کا لباس
کس طرح ممکن ہوا یہ روز و شب کا معجزہ

عبادت کار پھولوں اور محبت بار پیڑوں سے سرگوشیاں

پھول جیسے تیرے جوڑے پر مکمل تبصرہ
اور کلی جیسے تعلق کی خبر پھیلی ہوئی
پیڑ جیسے نیکیوں کا کوئی اونچا سائباں
اور تنا جیسے کسی کا غیر فانی اعتماد
شاخ جیسے کوئی انگڑائی بدن میں دیر تک
خار جیسے بسترِ شب پر مسلسل انتظار
نرم پتی جس طرح کانوں کی نازک سی لویں
اور پھل تیرے لبوں کے تلخ و شیریں ذائقے
کس طرح رو کش ہوئیں یہ نخل و گل کی دیویاں

مظلوم زمین اور بے رحم آسمان سے سرگوشیاں

آسماں جیسے مرے اند ر کی وسعت کا حصار
اور زمین جیسے کسی ماں کی مقدس چاہتیں
کہکشاں جب تم ڈرائنگ روم میں داخل ہوئی
گرم صحرا جیسے لا محدود کرب ِ انتظار
جلوہ ، قوس ِ قزح تیرے بدن کے زاویے
سر د پانی تیرے میٹھے نرم لہجے کی طرح
کوہ جیسے میری سوچوں کی بلندی کا وقار
کالے بادل دشتِ جاں میں درد کی تاریک شام
اور ہوا جیسے تری سانسوں کا کومل زیر وبم
کس طرح جاری ہوا ارض و سما کا سلسلہ

سر گوشیوں کے سوالوں اور حیرت زدہ جوابوں سے سر گوشیاں

وادی ، ذہن و نظر میں ایسے پیچیدہ سوال
اضطراب افزا تسلسل سے جنم لیتے رہے
آدمی اور کائناتِ خارجی میں ارتباط
کیوں ہے ۔ کیا ہے۔ کس طرح ہے اور آخر کس لئے
مجھ  پہ کیا موقوف شاید کوئی بھی سمجھا نہیں

1 comment:

  1. بہت ہی عمدہ نظمیں ہیں تمام

    ReplyDelete